پاکستانی خبریں

عوام کی مشکلات میں اضافہ، سرکاری اسپتالوں میں تشخیصی ٹیسٹ کی مفت سہولت ختم

پنجاب میں ہیلتھ کئیر نے ضلعی ہیڈکوارٹرز ڈی ایچ کیو، تحصیل ہیڈ کوارٹرز ٹی ایچ کیو اسپتالوں میں تشخیصی ٹیسٹوں کے ریٹس میں اضافہ کردیا ہے۔

سرکاری اسپتالوں میں اب ای سی جی بھی مفت نہیں ہو گی ۔ سو روپے ادا کرنا ہونگے۔ الٹراساونڈ کے لیے بھی ڈیڑھ سو روپے دینے پڑینگے۔ ایکسرے ساٹھ، سٹی سکین 2500، ہیپاٹائٹس بی اور سی کی سکریننگ کے 75روپے ادا کرنا ہوں گے۔

ایڈز کی سکریننگ کے 50 اوردانتوں کے علاج کے لیے او پی ڈی پرچی فیس 50روپے ادا کرنا ہوں گے ۔

سرکاری اسپتالوں میں کار کے لیے پارکنگ فیس 20روپے اور 10روپے موٹر سائیکل کے لیے فیس مقرر کی گئی ہے۔

پتھالوجی کے 43 مختلف اقسام پر بھی نئے ریٹ نافذ کر دیئے گئے ہیں۔ سی بی سی کے لیے 200 روپے، ای ایس آر کے لیے 60 روپے رکھے گئے ہیں۔ شوگر کا ٹیسٹ کروانے کے لیے مریض کو 65 روپے ادا کرنا ہوں گے ۔

ہیپاٹائٹس بی اور سی کی سکریننگ کے لیے 75 روپے مقرر کیے گئے ہیں۔ لیور فنگشنگ ٹیسٹ کے لیے مریضوں سے 300 روپے وصول ہوں گے۔ پیشاب کا مختلف بیماریوں کے لیے جائزہ لینے کے لیے تجزیہ کروانے کے لیے مریض 60 روپے دیں گے ۔

ٹیسٹ کی فیسوں میں اضافہ کرنے کا مقصد اسپتالوں کے لیےفنڈز اکٹھا کرنا ہے تاہم ایمرجنسی وارڈ میں آنے والے مریضوں کو ٹیسٹ کی مفت سہولت دستیاب ہو گی۔

 

 

Related Articles

Back to top button