اگر پنڈی سے اليکشن لڑوں تو جيت جاؤں گا: شعیب اختر

دنیا کے تیزترین اور قومی کرکٹ ٹیم کے سابق فاسٹ بولر نے کہا کہ ذہنی طور پر 2005ميں ريٹائرڈ ہوگيا تھا، 2005 کے بعد ميری باڈی جواب دے گئی تھی، آج کی گنز میری رفتار170کلومیٹر فی گھنٹہ ریکارڈ کرتیں۔

شعیب اختر نے کہا کہ سابق فاسٹ بولر وقار یونس نے میرا رن اَپ ٹھیک کرایا، وسيم اکرم نےکریئر کے دوران بہت سپورٹ کيا۔ خواہش ہے فرسٹ کلاس کرکٹرز زيادہ سے زیادہ کمائيں، نوجوان کرکٹرزکی تربيت کرنا بہت ضروری ہے،چيئرمين پی سی بی بنا تو تنخواہ نہيں لوں گا۔

سابق فاسٹ بولر شعیب اختر نے انکشاف کیا کہ 1993 میں کراچی کے علاقے لیاقت آباد میں رہتا تھا جہاں اردو بولنے والوں نے بہت سپورٹ کيا، مجھے فائرنگ کے دوران بحفاظت گراؤنڈ لے جاتے، ميں نے مہاجر لڑکوں کی وجہ سے کرکٹ کھيلی۔

شعیب اختر نے سیاست میں آنے کے حوالے سے ذکر کرتے ہوئے کہا کہ پنڈی ميں اليکشن لڑوں تو جيت جاؤں گا۔

انہوں نے کہا کہ میرا 1994 کے بجائے1997 میں ڈیبیو ہوا، 1999 کے ورلڈکپ کے بعد نيب نے بلايا۔

شعیب اختر نے یوٹیوب فالوورز کی تعداد بڑھانے کے الزام کا جواب دیتے ہوئےکہا کہ میرے دل میں بھارت کےلیے کوئی نفرت نہیں، پاکستان کو ضرورت پڑی تو ایل او سی پر موجود ہونگا۔

سابق کرکٹر نے مزید کہا کہ 2002 ميں فکسرز کو ہوٹل کے کمرے ميں بند کرکے پیٹا، مجھے گاڑيوں، گھر اور پيسوں کے علاوہ کپتانی کی آفر تھی مگر انکار کرديا۔

شعیب اختر نے سابق انگلش آل راؤنڈر اينڈريو فلنٹوف نے کہا تم لڑکيوں کی طرح بالنگ کرتے ہو، فلنٹوف پاکستان آيا تو گن گن کرگينديں ماريں۔

انہوں نےکہا کہ آصف جيسا بالر کرکٹ کی تاريخ ميں نہيں آيا،آصف کو ايک نہيں دو بلے مارنے چاہيے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں