پاکستانی خبریں

پارلیمانی قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس، ایم کیو ایم کا دفاتر کھولنے اور کارکنوں کی رہائی کا مطالبہ

قومی سلامتی کمیٹی کی پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس میں ایم کیو ایم نے دفاتر کھولنے اور کارکنوں کی رہائی کا مطالبہ کردیا اور کہا ٹی ایل پی بحال ہو سکتی ہے تو ہمارا کیا قصور ہے۔

اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی زیر صدارت قومی سلامتی کمیٹی کی پارلیمانی کمیٹی کا اجلاس ہوا ،اجلاس میں آرمی چیف اورڈی جی آئی ایس آئی سمیت عسکری حکام شریک ہوئے۔

اپوزیشن لیڈر، بلاول بھٹو ، وفاقی وزرا اور پارلیمانی لیڈر سمیت وزرائےاعلیٰ بھی اجلاس میں  شریک ہوئے۔، ذرائع کا کہنا ہے کہ اجلاس میں ٹی ایل پی سے معاہدے ،ٹی ٹی پی سے مذاکرات کا معاملہ زیر بحث آیا۔

قومی سلامتی پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس میں ایم کیوایم نے دفاتر کھولنے کا مطالبہ کردیا ، وفاقی وزیر خالدمقبول صدیقی نے کارکنوں کی رہائی کا بھی مطالبہ کرتے ہوئے کہا ٹی ایل پی بحال ہو سکتی ہے تو ہمارا کیا قصور ہے، دفترکھولنےکا مطالبہ کرتے رہے مگر اجازت نہیں دی گئی، پولیس والوں کو شہید کرنا بڑی دہشت گردی ہے تالیاں بجانا نہیں۔

اجلاس کے دوران خالد مقبول صدیقی سے سوال کیا گیا کہ آج وزیراعظم کیوں نہیں آئے ، جس پر خالد مقبول صدیقی نے جواب دیا کہ یہ تو وزیر اعظم سے ہی پوچھنا پڑے گا۔

 

 

Related Articles

Back to top button