پاکستانی خبریں

سندھ ہائیکورٹ کا خورشید شاہ کو دو سال سے این آئی سی وی ڈی میں زیرِعلاج رکھنے پربرہمی کا اظہار

سندھ ہائیکورٹ کے سکھر بینچ نے پیپلزپارٹی کے رہنما خورشید شاہ کو مسلسل دو سال سے نیشنل انسٹیٹیوٹ آف کارڈیو ويسكيولر ڈيزيزز (این آئی سی وی ڈی) میں زیر علاج رکھنے پر برہمی کا اظہار کیا ہے۔

سندھ ہائیکورٹ سکھر بینچ میں خورشید شاہ کو دو سال سے این آئی سی وی ڈی میں زیر علاج رکھے جانے کی درخواست پر سماعت کی۔

سماعت کے دوران عدالت نے نیب، این آئی سی وی ڈی اور سندھ حکومت کی رپورٹس کو مسترد کردیا۔

جسٹس عمر سیال نے این آئی سی وی ڈی کے ڈاکٹر سے استفسار کیا کہ بتائیں کون سا مریض ہے جس کا علاج دو سال میں مکمل نہیں ہوتا؟ محکمہ داخلہ نے بغیر کسی وجہ کے این آئی سی وی ڈی کو سب جیل قرار دیا ہے۔

عدالت نے حکم دیا کہ آئندہ سماعت پر متعلقہ حکام مکمل جواب پیش کریں اور اگر آئندہ سماعت پر مطمئن نہیں کیا گیا تو حکام کو ذاتی حیثیت میں عدالت میں بلایا جائے گا۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ وزیر اعلیٰ سندھ، این آئی سی وی ڈی کے انچارج اور ڈی جی نیب کو بھی بلاسکتے ہیں۔

عدالت نے چیف سیکرٹری سندھ، ڈی جی نیب سکھر، این آئی سی وی ڈی کے انچارج کو نوٹس جاری کرتے ہوئے سماعت 8 جولائی تک ملتوی کردی۔

خیال رہے کہ سابق اپوزیشن لیڈر خورشید شاہ نیب کی حراست میں ہیں تاہم اس وقت قومی اسمبلی کے بجٹ سیشن میں شرکت کیلئے اسلام آباد میں موجود ہیں۔

Related Articles

Back to top button