وزیراعظم کوئٹہ نہیں آئے تو عوام انہیں اسلام آباد میں بیٹھنے نہیں دیں گے: مریم نواز

وزیراعظم کوئٹہ نہیں آئے تو عوام انہیں اسلام آباد میں بیٹھنے نہیں دیں گے: مریم نواز

مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز کوئٹہ پہنچ گئے جہاں انہوں نے ہزارہ برادری کے مظاہرین سے اظہار یکجہتی کیا جو مچھ میں 11 کان کنوں کے قتل کے خلاف پانچ روز سے دھرنا دیئے بیٹھے ہیں۔

اس موقع پر پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے مچھ واقعے میں جاں بحق افراد کے لواحقین کے ساتھ اظہار تعزیت کرتے ہوئے کہا کہ ‘آپ پر جو قیامت ٹوٹی ہے اس پر میں اپنے والد نواز شریف، شہباز شریف اور اپنی طرف سے دلی تعزیت کرتی ہوں، پانچ دنوں سے ہم یہ سب ٹی وی پر دیکھ رہے ہیں، ہمیں آپ کی تکلیف کا احساس ہے، مجھے سمجھ نہیں آرہی ہے کہ اپنی بات کہاں سے شروع کروں اور کن الفاظ میں اپنے دکھ اور غم کو بیان کروں کیونکہ جس پر گزرتی ہے وہی جانتا ہے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘ہم سب اور پوری قوم آپ کے غم میں برابر کے شریک ہیں لیکن مجھے اس بات کا احساس ہے کہ جو آپ پر گزری ہے اور جو مصیبت آپ پر ٹوٹی ہے ہم اس کو سمجھ نہیں سکتے’۔

انہوں نے کہا کہ ‘مجھے وہ تصاویر بھی دکھائی گئیں جو میں نہیں دیکھ پائی’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘ایک بچی کسی بے حس کو کہہ رہی تھی جب تک آپ نہیں آئیں گے میں اپنے والد کو نہیں دفناؤں گی، ان میتوں میں ایک ایسے بچے کی میت بھی ہے جو کالج سے چھٹیوں اپنی فیس جمع کرنے کے لیے کان میں کام کرنے گیا تھا’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘وزیر اعظم عمران خان کو یہاں آنا پڑے گا اگر وہ کوئٹہ نہیں آسکتے تو عوام انہیں اسلام آباد میں بھی بیٹھنے نہیں دیں گے’۔

مچھ واقعہ

واضح رہے کہ 3 جنوری کو بلوچستان کے ضلع بولان کے علاقے مچھ میں مسلح افراد نے بندوق کے زور پر کمرے میں سونے والے 11 کان کنوں کو بے دردی سے قتل کردیا تھا۔

اس واقعے سے متعلق سامنے آنے والی معلومات سے پتا لگا تھا کہ ان مسلح افراد نے اہل تشیع ہزارہ برادری سے تعلق رکھنے والے ان 11 کوئلہ کان کنوں کے آنکھوں پر پٹی باندھی، ان کے ہاتھوں کو باندھا جس کے بعد انہیں قتل کیا گیا۔

اس واقعے کے بعد وزیراعظم عمران خان سمیت مختلف سیاسی شخصیات نے اظہار مذمت کیا تھا جبکہ عمران خان نے ایف سی کو واقعے میں ملوث افراد کو انصاف میں کٹہرے میں لانے کا حکم دیا تھا۔

تاہم اس واقعے کے فوری بعد سے ہرازہ برادری سے تعلق رکھنے والے افراد نے صوبائی دارالحکومت کوئٹہ کے مغربی بائی پاس پر اپنے پیاروں کی میتیں رکھ کر احتجاج شروع کردیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں