وزیراعلیٰ بلوچستان کا ہزارہ برادری سے معاملات بیٹھ کر حل کر نے کی اپیل

وزریراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے ہزارہ برادری سے اپیل کی ہے کہہجاں بحق افراد کی تدفین کریں۔وفاقی وزیرعلی زیدی نے یقین دہانی کرائی ہے کہ وزیراعظم سے ہماری بات ہوئی ہے وہ ضرور آئیں گے۔ گزارش ہے کہ جو لوگ شہید ہوئے ہیں ان کی تدفین کرنی چاہیے۔ تدفین کو وزیراعظم کے دورے سے نہ مشروط کیا جائے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان نے ہزارہ برادری سے معاملات بیٹھ کر حل کر نے کی اپیل کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہزارہ برادری دینی فرض کو وزیراعظم کے آنے سے مشروط نہ کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ بلوچستان، پاکستان اور ہزارہ کمیونٹی کے دشمن چاہتے ہیں ایسی چیزیں ہوں۔ ماضی کی نسبت بلوچستان میں امن برقرار رہا۔

کوئٹہ کے لوگ اس بات کی گواہی دیں گے کہ حالات بہتر ہوئے، دھرنامظاہرین سے بات کریں گے وہ ہمارے بھائی ہیں۔ دہشت گردی کےخاتمے کےلیے پہلے دن سے کوشش کر رہےہیں۔

انہوں نے کہا ہم سب پاکستانی ہیں، یہاں پر کسی کو دوسرے سے الگ نہیں دیکھنا چاہتے۔ ہماری کوشش ہے کہ معاملات کوآگے کی طرف لے کر جائیں۔

جام کمال نے کہا کہ بلوچستان نے 10سال بہت مشکل وقت میں گزارے۔ بلوچستان سےدشمنی رکھنے والے چاہتے ہیں کہ یہاں خرابی پیدا ہو۔ ہزارہ کمیونٹی کوساتھ لےکرچلنا چاہتے ہیں لیکن دشمنوں کو یہ پسند نہیں۔

وفاقی وزیر برائے بحری امورعلی زیدی نے کہا کہ پاکستان کےخارجی دشمن اس قسم کی حرکتیں کرتے ہیں۔ ہم جب حکومت میں نہیں تھےتو سنتے تھے بیرونی ہاتھ ہیں۔ کلبھوشن جیسےلوگ یہیں سےپکڑے گئے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں