ماں اورکمسن بچی سے زیادتی کے مرکزی ملزم نے اعتراف جرم کرلیا

ماں اورکمسن بچی سے زیادتی کے مرکزی ملزم نے اعتراف جرم کرلیا ،ملزم رفیق نےبتایا میں نےساتھی کے ساتھ مل کرتین دن تک بچی سےزیادتی کی۔

تفصیلات کے مطابق ایس ایس پی کشمور نے ماں اور چار سالہ بچی کیساتھ اجتماعی زیادتی کے حوالے سے بتایا کہ بچی کو بازیاب کراکر ظالم کو گرفتار کرلیا گیا ہے ، اےایس آئی نےفرض شناسی کی مثال قائم کی، ےایس آئی نےمجرم کی گرفتاری کیلئے خطرناک مشن کیا۔

ایس ایس پی کشمور نے بتایا کہ سرکارکی مدعیت میں زیادتی کا مقدمہ درج کرلیا ہے ، ملزم رفیق ملک نےاعتراف جرم قبول کرلیا ہے اور بتایا کہ ساتھی کے ساتھ مل کرتین دن تک بچی سےزیادتی کی تاہم دوران تفتیش ملزم سےکسی اور کیس کےشواہدنہیں ملے۔

انھوں نے کہا جس کرب سے ہم گزرے ہیں وہ بیان نہیں کرسکتا، جس کو دعاؤں کے بعد اولاد ملی اس نے گھناؤنا کام کیا، کیس میں مکمل اور شفاف ڈی این اے کرائےگئے جبکہ 7اےٹی اے کی دفعہ بھی لگائی گئی ہیں۔

ایس ایس پی کشمور کا کہنا تھا کہ بچی کا آپریشن ہوا ہے وہ روبصحت ہورہی ہے، پولیس کی جانب سے بچی کی ہرممکن مددکی جارہی ہے۔
خیال رہے کشمور پولیس کے اے ایس آئی محمد بخش برڑو نے زیادتی کا نشانہ بننے والی ماں اور اس کی کمسن بیٹی سے زیادتی میں ملوث ملزمان کو گرفتار کرنے کے لیے اپنی بیٹی اور بیوی کی قربانی دی۔

ذرائع کے مطابق اے ایس آئی نے ملزمان کو گرفتار کرنے کے لیے ان کی خواہش پر اپنی بیٹی اور بیوی سے بات کروائی ان کو ہوٹل پر بلا کر درندہ صفت زیادتی میں ملوث ایک اہم مرکزی ملزم کو گرفتار کروا کر اپنا اور سندھ پولیس کا نام روشن کیا۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ گرفتار ملزم کی نشاندہی پر چھاپہ مار کر کمسن بچی کو بازیاب کروالیا ، بچی کے جسم پر تشدد کے نشانات موجود تھے جبکہ واقعے میں ملوث دوسرا ملزم فرار ہے جس کی گرفتاری کے لیے چھاپے مارے جارہے ہیں۔

سول سوسائٹی سیاسی و سماجی شخصیات نے پولیس کے جوان اے ایس آئی کی کاوش پر انہیں خراج تحسین پیش کیا۔

 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں