واضح اکثریت ملی تو گلگت بلتستان کو حق ملکیت دلوانے کے لیے قانون سازی کریں گے:بلاول بھٹو

واضح اکثریت ملی تو گلگت بلتستان کو حق ملکیت دلوانے کے لیے قانون سازی کریں گے:بلاول بھٹو

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان میں واضح اکثریت کی صورت میں حق ملکیت دلوانے کے لیے قانون سازی کریں گے۔

دیا میر میں عوامی جلسے سے خظاب کے دوران انہوں نے کہا کہ ماضی میں آپ نے ذوالفقار علی بھٹو کا ساتھ دیا اور انہوں نے ایف سی آر کا خاتمہ کیا۔

بلاول بھٹو زرداری نے گلگت بلتستان کے نوجوانوں کو حق روزگار دینے کا بھی وعدہ کیا۔‎

انہوں نے کہا کہ تاریخ گواہ ہے جب بھی پیپلز پارٹی کی حکومت آئی ہے، لوگوں کو روزگار ملا ہے۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ ذوالفقار علی بھٹو نے گلگت بلتستان کے عوام کو اتنا روزگار دیا کہ لینے والے کم پڑگئے، انہوں نے کھانے پینے کی اشیا کے ساتھ ساتھ کپڑوں پر بھی سبسڈی دی۔

ان کا کہنا تھا کہ ذوالفقار علی بھٹو نے قراقرم کی بنیاد رکھ کر یہاں کے عوام کے لیے معاشی انقلاب شروع کیا تھا، اسی نظریے کو فالو کرتے ہوئے ہم ان کے مشن کو آگے لے کر جانا چاہتے ہیں۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ بینظیر بھٹو نے لیڈی ہیلتھ ورکرز اور خواتین پولیس قائم کی کیوں کہ وہ جانتی تھیں کہ ہر طبقے کو معاشی مواقع دیے جائیں اس وقت ہی ملک کی معشیت بہتر ہوسکتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ یہ پاکستاجن کی وجہ سے سی پیک بنا، انہیں اس سے کوئی فائدہ نہیں ہوا، بلاول بھٹو ن پیپلز پارٹی تھی جس نے گلگت بلتستان کو شناخت دی، یہاں اسمبلی قائم کی، گورنر اور وزیراعلیٰ کے عہدے دیے۔

ان کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت نے بینظیر انکم سپورٹ پروگرام سے بینظیر کی تصویر ہٹا کر وہ عوام کے دل سے انہیں مٹا سکتا ہے لیکن یہ ان کی بھول ہے، یہاں کے عوام اور اس ملک کی ہر عورت بینظیر بھٹو کو کبھی نہیں بھول سکتی۔

انہوں نے کہا کہ جس طرح مقامی لوگوں کو روزگار سے محروم رکھا جارہا ہے، ہم اس کی مذمت کرتے ہیں۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ہم وعدہ کرتے ہیں کہ جب بھی قومی یا مقامی سطح پر منصوبہ شروع کرتے ہیں، آپ لوگوں کا خیال رکھا جائے۔

انہوں نے کہا کہ اب جو کام رہتا ہے وہ صرف پیپلزپارٹی کرسکتی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں