حکومت کو کیپٹن صفدر کی گرفتاری پر معذرت کرنی چاہیے، رانا ثنااللہ

مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما رانا ثنااللہ نے کہا ہے کہ وفاقی حکومت کو کیپٹن (ر) صفدر کی گرفتاری کے واقعہ پر معذرت کرنی چاہیے۔

رانا ثنااللہ کا کہنا تھا کہ صرف انتقام اور نفرت کے لیے کیپٹن (ر) صفدر کو گرفتار کیا گیا۔

انہوں نے کہا کہ کیپٹن (ر) صفدر کی دروازہ توڑ کر گرفتاری خلاف آئین ہے، یہ آئین کے آرٹیکل 14 کی خلاف ورزی ہے۔

اس موقع پر مسلم لیگ ن کے سینئر رہنما خرم دستگیر کا کہنا تھا کہ ملک میں جو ہو رہا ہے سب دیکھ رہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ مزار قائد وفاق کے دائرہ اختیار میں آتا ہے، حکومت اپنی فسطائی سوچ کے ذریعے انارکی پھیلا رہی ہے۔

قبل ازیں مسلم لیگ ن کے رہنما شاہد خاقان عباسی نے کہا تھا کہ وزیر اعظم نے اداروں کو سیاست میں ملوث کر دیا۔

ن لیگی رہنما اور سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے پی ڈی ایم رہنماؤں کے ہمراہ میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ کراچی واقعہ ریکارڈ کا حصہ ہے اور کیپٹن (ر) صفدر کی گرفتاری سب کے سامنے ہے۔

انہوں نے کہا کہ کراچی واقعہ پر وزیر اعظم کو چاہیے تھا کہ وہ وزیر اعلیٰ سندھ کو فون کرتے اور ان سے اس معاملے پر بات کرتے لیکن کیا گزشتہ دنوں سے وزیر اعظم نے ملکی معاملات پر کوئی بات کی۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم ملکی معاملات سے ناآشنا ہیں اور انہیں پرواہ ہی نہیں کہ ملک میں کیا ہو رہا ہے۔

پی ڈی ایم رہنما نے کہا کہ وفاق اور صوبے کے درمیان تعلقات کا کیا بنے گا ؟ وفاق ملکی مسائل کے حل کے لیے کچھ نہیں کر رہا، سازش سے کیا ملے گا ؟

اس موقع پر راجہ پرویز اشرف نے کہا کہ وزیر اعظم سوچنے سمجھنے کی صلاحیت سے محروم ہو رہے ہیں اور ملک میں غیر یقینی کی صورتحال قائم ہے۔

انہوں نے کہا کہ کراچی واقعے سے ایسا لگا کہ وفاق خود اس میں ملوث ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں