نیب کراچی نے لیاقت قائم خانی کے خاندان کے 7افراد کو طلب کرلیا

قومی احتساب بیورو (نیب ) نے قیمتی اشیا برآمدگی کیس سابق ڈی جی پارکس لیاقت قائم خانی کے خاندان کے 7افراد کو طلب کرلیا،قیمتی اشیا میں نوادرات گاڑیاں اورجائیدادیں شامل ہیں۔

تفصیلات کے مطابق قومی احتساب بیورو (نیب ) نے سابق ڈی جی پارکس لیاقت قائم خانی سے قیمتی اشیا برآمدگی کیس کا دائرہ وسیع کرتے ہوئے لیاقت قائم خانی کے بھائیوں اور بھتیجوں کو بطور بے نامی دارشامل تفتیش کرلیا۔

نیب کراچی نے لیاقت قائم خانی کے خاندان کے 7افراد کو طلب کرلیا ، قیمتی اشیا میں نوادرات گاڑیاں اورجائیدادیں شامل ہیں۔

دوسری جانب نیب طلبی پر لیاقت قائم خانی کے بھائیوں اور بھتیجوں نے اسلام آباد ہائی کورٹ سے رجوع کیا ، جس کے بعد عدالت نے نیب کو 11 نومبر تک ملزمان کی گرفتاری سے روک دیا ، ملزمان کی 50،50ہزار کے مچلکوں کے عوض 11نومبر تک عبوری ضمانت منظور کی گئی۔

اسلام آباد ہائیکورٹ کے دو رکنی بینچ نے 11نومبر تک نیب سے جواب طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت 11 نومبر تک ملتوی کردی۔

واضح رہے سابق ڈی جی پارکس لیاقت قائم خانی کو نیب راولپنڈی نے کراچی سے گرفتار کیا تھا، ملزم پر کراچی میں باغ ابن قاسم کی زمین کی غیر قانونی الاٹمنٹ اور کروڑوں کے غیر قانونی اثاثے بنانے کا الزام ہے۔

ملزم کے گھر اورتجوریوں سےزیورات،زمینوں کےکاغذات اور قیمتی سامان برآمدہوا جبکہ نیب ملزم کی پُرتعیش گاڑیاں اور قیمتی اسلحہ بھی تحویل میں لے چکا ہے جبکہ لیاقت قائم خانی کے اثاثوں کی مالیت کا تخمیہ دس ارب روپے تک پہنچ گیا تھا۔

خیال رہے لیاقت قائم خانہ بلدیہ عظمٰی کراچی کے طاقت ور ترین افسر سمجھے جاتے تھے، سیاسی اثرو رسوخ کے باعث وہ اٹھارہ سال سے تحقیقاتی اداروں سے بچتے رہے۔

لیاقت قائم خانی کے خلاف نیب تحقیقات شروع ہوئیں، پھربند کر دی گئی، 2013 میں بھی اینٹی کرپشن نے شہید بے نظیرپارک میں کرپشن کی تحقیقات کی، اینٹی کرپشن نے بھی لیاقت قائم خانی کے خلاف تحقیقات روک دی گئی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں