موٹروے زیادتی کیس: جائے وقوعہ پر پہنچنے والے اہلکار نے کیا درد ناک مناظر دیکھے؟ رونگٹے کھڑے ہو جائیں گے

زیادتی کا شکار خاتون کی مدد کےلیے پہنچنے والی ڈولفن فورس کے اہلکار نے بیان میں کہا ہے کہ کھائی میں اتر کر خاتون کے پاس گئے متاثرہ خاتون نے بچوں کو حصار میں لیا ہوا تھا۔

گزشتہ روز لاہور کے قریب گوجرپورہ میں تین بچوں کی ماں کے ساتھ زیادتی کا واقعہ پیش آیا تھا، کیس کے حوالے جائے وقوعہ پر پہنچنے والے ڈولفن فورس اہلکار علی عباس کے بیان نے رونگٹے کھڑے کردئیے۔

ڈولفن فورس اہلکار علی عباس کا کہنا ہے کہ 2 بجکر 49 منٹ پر 15 پر کال موصول ہوئی تھی، موقع پر پہنچے تو گاڑی کا شیشہ ٹوٹا ہوا تھا اور اس میں کوئی نہیں تھا۔

اہلکار نے بتایا کہ کالر کی تلاش کرنے کےلیے لائٹ جلائی تو بچے کا جوتا نظر آیا، کھائی اترے تو دوسرا جوتا نظر آیا، جس پر ہمیں معاملہ مشکوک معلوم ہوا۔

علی عباس نے بتایا کہ معاملے کو مشکوک جانتے ہوئے ہم نے ہوائی فائرنگ بھی کی لیکن اندھیرا بہت تھا جس کے باعث کچھ دکھائی نہیں دے رہا تھا۔

ڈولفن فورس اہلکار نے بتایا کہ ہوائی فائرنگ کے بعد جھاڑیوں کی طرف گئے تو آواز آئی، جس پر ہم نے آواز لگائی تو خاتون نے ’بھائی‘ کہہ کر پکارا، قریب جاکر دیکھا متاثرہ خاتون نے بچوں کو حصار میں لیا ہوا تھا، جس کے بعد معلوم ہوا کہ 15 پر کال کرنے والا کوئی راہ گیر تھا جو جاچکا تھا۔

واضح رہے کہ کچھ دیر قبل 15 پر کال کرنے والے واقعے کے عینی شاہد خالد مسعود نے نجی چینل سے گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’ماموں کو چھوڑ کر واپس آرہا تھا تو مجھے گاڑی نظر آئی، گاڑی کے قریب خاتون اور ان کے ساتھ ایک شخص موجود تھا جس نے خاتون کو بازو سے پکڑکر تھپڑ مارا اور دوسری طرف لے جانے لگا‘۔

خالد مسعود کا کہنا تھا کہ ایسا لگا کہ خاتون مدد مانگنے کے لیے سڑک پر آئیں لیکن ایک شخص دست درازی کررہا تھا، پولیس کو آگاہ کرکے گھر چلا گیا، صبح خبر دیکھی تو انتہائی دکھ ہوا۔

مزید پڑھیں: گجر پورہ میں خاتون پر تشدد اور زیادتی کرنے والے ملزمان کے گاؤں کی شناخت ہوگئی

عینی شاہد کا کہنا تھا کہ واقعہ لنک روڈ پر ہوا جو آگے جاکر موٹروے سے ملتا ہے، رات کے وقت مذکورہ سڑک سنسان ہوتی ہے جبکہ دن کے اوقات میں ٹریفک ہوتا ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز لاہور گجرپورہ میں موٹروے پر خاتون کی گاڑی میں پیٹرول ختم ہوا تو مسلح ملزمان آن پہنچے اور انہوں نے خاتون کو بچوں کے سامنے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا تھا، پولیس نے ملزمان کے خاکے تیار کرلیے مزید تحقیقات جاری ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں