مسلم لیگ ن کا آئی جی پنجاب شعیب دستگیر کی تبدیلی کو چیلنج کرنے کا فیصلہ

پاکستان مسلم لیگ ن نے آئی جی پنجاب شعیب دستگیر کی تبدیلی کو عدالت میں چیلنج کرنے کا فیصلہ کر لیا۔

نجی چینل سے گفتگو کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کے رہنما ملک احمد خان نے کہا کہ آئی جی پنجاب کی تبدیلی کا معاملہ سیاسی کے ساتھ قانونی بھی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پولیس آرڈر کے تحت آئی جی کی مدت ملازمت تین سال ہے جس کی بار بار خلاف ورزی کی جا رہی ہے اور اس معاملے پر مسلم لیگ ن عدالت میں درخواست دائر کرے گی۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز پنجاب حکومت کی جانب سے آئی جی پنجاب شعیب دستگیر کو تبدیل کر کے ان کی جگہ انعام غنی کو نیا آئی جی پنجاب تعینات کر دیا گیا۔

ذرائع کے مطابق مشاورت کے بغیر سی سی پی او لاہور کی تعیناتی پر انسپکٹر جنرل آف پنجاب پولیس شعیب دستگیر صوبائی حکومت سے ناراض ہوئے تھے اور احتجاجا تین روز سے دفتر نہیں گئے تھے۔

مزید پڑھیں: آئی جی پنجاب شعیب دستگیر کو تبدیل کرنے کا فیصلہ

ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے وزیر اعلیٰ پنجاب سے مشاورت کے بعد آئی پنجاب کو ہٹایا۔

خیال رہے کہ شعیب دستگیر کو 26 نومبر 2019 کو آئی جی پنجاب تعینات کیا گیا تھا۔ شعیب دستگیر بطور آئی جی پنجاب 10 ماہ بھی مکمل نہ کرسکیں۔ پنجاب میں دو سالوں میں پانچ آئی جی تبدیل ہوچکے ہیں۔

ذرائع کے مطابق آئی جی شعیب دستگیر کی مرضی کے خلاف عمر شیخ کو سی سی پی او لاہور تعینات کیا گیا تھا، جس کے سبب انہوں نے تین دن سے دفتر کا رخ نہیں کیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں