بی آرٹی ميں سفر کرنا اب اتنا آسان نہیں، حکومت کا نسوار کے علاوہ مزید کن اشیاء کے استعمال پر پابندی؟

پشاور بی آر ٹی کی بسوں کو صاف رکھنے کے لئے انتظامیہ کی جانب سے نسوار کے استعمال پر پابندی لگا دی گئی ہے۔

مسافروں کو سفری سہولیات ایس او پیز پر عملدرآمد سے مشروط ہوں گی۔ انتطامیہ نے مسافروں کے لیے دوران سفر نسوار کے استعمال پر ہی نہیں بلکہ ساتھ رکھنے پر بھی پابندی عائد کر دی۔

بسوں میں صفائی کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لئے نسوار اور تمباکو والی اشیاء کو بسوں میں لانے پر پابندی لگادی گئی ہے۔

سفر کے دوران قینچی اور چھری لانے پر بھی پابندی ہے۔ بس میں نسوار اور تمباکو کے استعمال پر پابندی کے فیصلے پر شہری بھی خوش ہیں۔ میٹرو بس میں کورونا ایس او پیز کے تحت بغیر ماسک کے مسافروں کو سوار ہونے کی اجازت نہیں ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے پشاور میں بی آر ٹی منصوبے کا افتتاح13 اگست کو کیا تھا۔ اس کا ستائیس کلو میٹر طویل ہے جس پر220 ائیر کنڈیشنڈ بسیں چلائی جا رہی ہیں۔

عوام کی سہولت کے لیے ایک ہی ٹریک پر دو روٹ متعارف کرائے گئے ہیں۔ چمکنی سے کارخانو مارکیٹ کا ایک روٹ سات اسٹاپ پر مشتمل ہے اور 45 منٹ میں سفر طے ہو گا۔

بی آر ٹی کی بسوں میں سفر کرنے کے لیے آپ کو “زو کارڈ” حاصل کرنا ہو گا۔ زو کارڈ بی آرٹی کے ہر اسٹیشن کے ٹکٹ آفس یا ٹکٹ وینڈنگ مشین کے ذریعے حاصل کیا جا سکتا ہے۔

پشاور کے اہم تعلیمی ادارے، اسپتال اور کمرشل ادارے بی آر ٹی کے روٹ سے منسلک ہیں۔ پہلے پانچ کلومیٹر سفر کا کرایہ دس روپے رکھا گیا ہے۔ ہر پانچ کلومیٹر کے بعد کرائے میں پانچ روپے اضافہ ہوگا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں