مودی کی تنگ نظری ساری دنیا کے سامنے عیاں، کرتارپور راہداری کھولنے کی پاکستانی پیشکش مسترد

پاکستان نے سکھوں کے مقدس عبادت گاہ کرتارپور راہداری دوبارہ کھولنے کا اعلان کردیا جبکہ بھارت نے انکار کر دیا۔

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے ٹوئٹر پر اپنے بیان میں کہاکہ دنیا بھر میں عبادت گاہیں دوبارہ کھول دی گئی ہیں، پاکستان سب سکھ زائرین کیلئے کرتارپور گورودوارہم دوبارہ کھولنے جارہا ہے ۔

شاہ محمود قریشی نے کہاکہ بھارت سے کہا گیا ہے کہ 29جون سے گورودوارہ کرتارپور کھول دیا جائیگا۔ بھارت گورودوارہ دوبارہ کھولنے کے حوالے سے اپنی سائیڈ پر انتظامات مکمل کرلے ، گورودوارہ دوبارہ مہاراجہ رنجیت سنگھ کی برسی پر کھولا جارہا ہے ۔

دوسری جانب ترجمان دفتر خارجہ نے کہاکہ پاکستان نے بھارت کو کرتار پور راہداری 29 جون سے کھولنے پر آمادگی سے آگاہ کر دیا۔

ترجمان دفتر خارجہ نے کہا بابا گورو نانک کی 550 ویں سالگرہ تقریبات کے موقع پر کرتار پور راہداری کھول کر سکھ یاتریوں اور عالمی برادری کی دیرینہ خواہش پوری کی گئی، کرتارپور راہداری صحیح معنوں میں امن اور مذہبی ہم آہنگی کی علامت ہے ۔

بھارت سمیت دنیا بھر میں سکھ برادری کی جانب سے حکومت پاکستان کے اس سنگ میل اقدام کو بھرپور طور پر سراہا گیا، عائشہ فاروقی نے کہا کوویڈ 19 وبا کے پیش نظر راہداری کو رواں برس 16 مارچ کو عارضی طور پر بند کیا گیا، اب دنیا بھر میں مذہبی مقامات آہستہ آہستہ کھل رہے ہیں۔ اسی لئے پاکستان نے سکھ یاتریوں کیلئے کرتارپور راہداری دوبارہ کھولنے کی تیاریاں کی ہیں ، پاکستان نے بھارت کو راہداری کے دوبارہ کھلنے پر ایس او پیز کو حتمی شکل دینے کیلئے دعوت دے دی۔

دوسری طرف بھارت نے سکھوں کے مذہبی مقام کرتار پور گورودوارہ تک جانے والی سرحدی راہداری کھولنے سے انکار کردیاہے ۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق حکومت نے 29 جون سے کرتار پورراہداری کھولنے کی پاکستان کی پیشکش کو مسترد کردیاہے ۔

بھارتی حکام کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس کی وجہ سے حفاظتی اقدامات کے تحت سرحدوں پر آمد و رفت معطل ہے۔

اس حوالے سے کوئی بھی فیصلہ محکمہ صحت کے حکام اور متعلقہ اداروں کی مشاورت سے کیا جائے گا، بھارت کا یہ بھی کہنا ہے کہ دو دن کے نوٹس پر راہداری کھولنا ممکن نہیں کیونکہ معاہدے کے تحت بھارت یاتریوں کی تفصیلات سفر سے 7 روز قبل پاکستان کو دینے کا پابند ہے ۔

واضح‌ رہے کہ :کرونا وائرس کے خطرے کے پیش نظر بھارت نے کرتارپور آنے والے یاتریوں پر پابندی لگا دی تھی۔ بھارت کی وزارت داخلہ نے کرونا کے خلاف حفاظتی اقدام کو جاری رکھتے ہوئے یہ پابندی لگائی ہے۔ یہ پابندی بھارت کی جانب سے 16 مارچ رات بارہ بچے سے لاگو ہوگی اور اگلے حکم تک جاری رہے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں