لوڈشیڈنگ سے تنگ شہری سراپا احتجاج، ملازمین کو ہی کھمبے سے باندھ دیا

کراچی میں کےالیکٹرک کے اعلیٰ حکام کی عوام دشمن پالیسیوں کی سزا ملازمین کو بھگتنا پڑ گئی۔

کراچی میں لوڈشیڈنگ سے تنگ شہریوں نے کےالیکٹرک ملازمین کو کھمبے سے باندھ دیا، ان بےقصور ملازمین کی ویڈیو بنانے اور مذاق اڑانے کی بجائے عوام کو کےالیکٹرک کے اعلیٰ حکام اور پالیسیوں کے خلاف احتجاج کرنا چاہیے۔

تفصیلات کے مطابق سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو وائرل ہوئی ہے جس میں شہرقائد کے علاقے گلشن اقبال میں شہریوں نے بجلی کی بدترین لوڈشیڈنگ کیخلاف احتجاج کرتے ہوئے کےالیکٹرک کے ملازمین کو پکڑ کر کھمبے سے باندھ دیا۔ ان بےقصور ملازمین کی ویڈیو بنا کر قانون شکنی کی گئی۔ کیونکہ قانون ملازمین کے ساتھ اس طرح کے غیرمناسب سلوک کی اجازت نہیں دیتا۔

کےالیکٹرک کی پالیسی حکام کے مطابق بجلی کی لوڈشیڈنگ ان علاقوں میں کی جاتی ہے، جہاں بجلی کے بل ادا نہیں کیے جارہے یا بجلی چوری کی جاتی ہے۔

دوسری جانب کے الیکٹرک کو اضافی ایندھن کی فراہمی کے باوجود شہر میں لوڈشیڈنگ کا سلسلہ جاری ہے۔ کے الیکٹرک کی جانب سے کراچی کے مختلف علاقوں میں اعلانیہ اور غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ اور زائدبلنگ کے ساتھ ساتھ لوڈ شیڈنگ سے مستثنیٰ علاقوں میں بھی ایندھن کی کمی کا عذر پیش کرکے روزانہ ایک سے 8 گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ کی جارہی ہے، جس سے سخت گرمی میں شہری مسلسل پریشان اور بے حال ہیں۔

کراچی کے مختلف علاقوں لیاقت آباد، نارتھ کراچی، فیڈرل بی ایریا، نارتھ ناظم آباد، ناظم آباد، گلشن اقبال، گلزار ہجری، ملیر، شاہ فیصل کالونی، کورنگی، لانڈھی، شاہ لطیف ٹائون، قیوم آباد، اختر کالونی، منطور کالونی، محمود آباد، دہلی کالونی، برنس روڈ، کھارادر، لیاری، کیماڑی، بلدیہ ٹائون، اورنگی ٹائون، سرجانی ٹائون، گلشن معمار اور دیگر علاقوں میں ایک سے 8 گھنٹے تک اعلانیہ اور غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ کی جارہی ہے۔

جو علاقے بجلی کے بلوں کی 100فیصد ادائیگیوں کے سبب لوڈشیدنگ سے مستثنیٰ ہیں وہاں بھی مختلف اوقات میں ایک سے 3 گھنٹے تک لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے، جس کے لیے صارفین کو پیشگی پیغام دیا جارہا ہے کہ فلاں وقت سے فلاں وقت تک ایندھن کی کمی کے باعث بجلی مہیا نہیں کی جاسکے گی۔

 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں