بین الاقوامی

افغان طالبان کا کابل میں داخلہ، اشرف غنی نے استعفیٰ دے دیا

افغان طالبان کے کابل میں داخل ہونے کے بعد افغان صدر اشرف غنی نے استعفیٰ دے دیا ہے۔ اطلاعات ہیں کہ علی احمد جلالی کو نئی عبوری حکومت کا سربراہ مقرر کیا جائے گا۔

اس سے قبل امریکی و برطانوی میڈیا نے دعویٰ کیا تھا کہ طالبان قیادت کے مطالبے پر کابل میں قومی مصالحتی کونسل کے سربراہ عبداللہ اللہ کی ثالثی میں مذاکرات جاری ہیں اور امکان ظاہر کیا گیا تھا کہ افغان صدر اشرف غنی اپنے عہدے سے مستعفی ہوجائیں گے۔

غیر ملکی میڈیا کا کہنا تھا کہ افغان حکومت اقتدار کی پُر امن منتقلی کےلیے آمادہ ہوگئی ہے جس کے بعد افغانستان کے سابق وزیر داخلہ علی احمد جلالی کو عبوری حکومت کا سربراہ ہوں گے۔

اب سے کچھ دیر قبل افغانستان کے قائم مقام وزیر داخلہ نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ افغان دارالحکومت کابل پر حملہ نہیں ہوا، کابل کا تحفظ افغان فورسز کی ذمہ داری ہے، انہوں نے کہا تھا کہ اقتدار کی منتقلی کا عمل پر امن طریقے سے ہوگا اور کابل میں شہریوں کا تحفظ بھی یقینی بنایا جائے گا۔

دوسری جانب بی بی سی کا کہنا ہے کہ طالبان کے کابل میں داخل ہوتے ہی بڑی تعداد شہریوں نے میں کابل سے نکلنا شروع کردیا ہے، جس کے باعث دارالحکومت میں شدید ٹریفک جام ہوگیا اور ہر طرف افراتفری کا ماحول ہے۔

گذشتہ روز افغان صحافی ہارون نجفی زادہ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری اپنے بیان میں دعویٰ کیا تھا کہ افغان صدر اشرف غنی نے استعفیٰ کا پیغام ریکارڈ کرادیا ہےجو کسی بھی وقت جاری کردیا جائےگا۔

Related Articles

Back to top button