بین الاقوامی

نہتے فلسطینیوں پر اسرائیلی پولیس کی فائرنگ، 200 سے زائد افراد زخمی

یروشلم میں واقع مسجد اقصیٰ کے احاطے میں یہودی قوم پرستوں کے مجوزہ مارچ سے قبل نہتے فلسطینیوں اور اسرائیلی پولیس کے مابین جھڑپیں ہوئی ہیں۔ اسرائیلی پولیس سے تازہ جھڑپوں میں 200 سے زائد نہتے فلسطینی زخمی ہوگئے ہیں۔

برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی کے مطابق مسجد اقصٰی کے احاطے میں اسرائیلی پولیس نے نہتے فلسطینیوں پر اسٹن گرینیڈ اور دستی بموں سے حملہ کردیا۔

اسرائیلی پولیس کے دستی بم حملے میں سینکڑوں نہتے فلسطینی زخمی ہوگئے۔

قابض اسرائیلی فوج نے مسجد اقصی میں مسلمانوں کے داخلے پر پابندی لگا رکھی ہے جس کے بعد شہر میں پچھلے ایک ہفتے سے بدامنی دیکھی گئی ہے۔

اس سے قبل اسرائیلی پولیس نے یہودیوں کو مسجد اقصیٰ کے کمپاؤنڈ میں داخل ہونے سے روکنے کا فیصلہ کیا تھا جہاں یہودی قوم پرستوں کی جانب سے یروشلم یوم پرچم مارچ ہونا تھا۔

یروشلم یوم پرچم مارچ 1967 میں اسرائیل کی جانب سے مشرقی یروشلم پر قبضے کی یاد میں منایا جاتا ہے۔ اس موقع پر عام طور پر سیکڑوں پرچم لہراتے اسرائیلی نوجوان مسلمان علاقوں میں سے گزرتے ہیں اور محب وطن گیت گاتے ہیں۔

مشرقی یروشیلم میں مسلمانوں کے کئی مقدس مقامات ہیں۔ یہودی قوم پرست اس سال بھی رمضان کے آخری دنوں میں یہ مارچ کرنا چاہتے ہیں۔

اسرائیلی پولیس کی جانب سے تازہ دستی بموں کے حملے کو بہت سے فلسطینیوں نے دانستہ طور پر اشتعال انگیزی قرار دیا ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز مسجد اقصیٰ میں اسرائیلی پولیس کے حملے میں 170 فلسطینی شہری زخمی ہوئے تھے۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق رمضان المبارک کے آخری جمعہ کے روز نماز جمعہ کے دوران اسرائیلی پولیس کی جانب سے مسجد اقصیٰ کے احاطے میں شدید فائرنگ اور شیلنگ کی گئی تھی۔

قابض اسرائیلی فوج نے مسجد اقصی میں مسلمانوں کے داخلے پر پابندی لگادی تھی تاہم مسلمانوں نے احتجاج کیا اور مسجد میں داخل ہو گئے اور نماز ادا کی تھی۔

بعد ازاں قابض اسرائیلی فوج بھی مسجد اقصیٰ میں داخل ہو گئی اور نمازیوں کو عبادات سے روکا، جس پر احاطہ میدان جنگ میں بدل گیا اور جھڑپوں میں 170 سے زائد فلسطینی زخمی ہو گئے تھے۔

Related Articles

Back to top button