کورونا وائرس سے سعودی عرب کا سماجی ڈھانچہ تباہ، طلاق کی شرح میں ہوا کتنا اضافہ؟

کورونا کے سبب لاک ڈاون کے دوران سعودی عرب میں طلاق کی شرح آسمان کی بلندیوں کو چھونے لگی۔ عدم برداشت اور گھریلو تشدد کے واقعات خاندانی نظام کے لئے خطرہ بن گئے۔

کورونا وائرس نے سعودی عرب کا سماجی ڈھانچہ تباہ کر کے رکھ دیا، سعودی عرب میں طلاق کی شرح میں اچانک اضافہ ریکارڈ ہونے لگا۔

خانگی امور سے متعلق کیے جانے والے سروے میں جاری کیے جانے والے اعداد و شمار نے لوگوں کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔ مملکت میں 5 برس کے دوران طلاق کے فی گھنٹہ سات واقعات ریکارڈ کیے گئے۔

صرف جولائی میں چار ہزار سے زائد طلاقیں ہوئیں، یہ ایک ماہ میں ہونے والی ریکارڈ طلاقیں ہیں۔

کرفیو کے دوران اپریل کے ماہ میں ملک بھر میں ایک سو چونتیس طلاقیں رپورٹ ہوئیں تھیں۔

سعودی وزارت انصاف نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ ملک میں طلاق کی شرح میں 53 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

معاشرتی ماہرین کے مطابق سعودی عرب میں طلاق کے واقعات کے محرکات میں سوشل میڈیا کے استعمال کا حد سے بڑھتا ہوا رجحان،، غصے میں ایک دوسرے کو برداشت نہ کرنا،،گھریلو تشدد، دلہا دلہن کی عمروں میں بڑا فرق اور چھوٹی عمر میں شادیاں شامل ہیں۔جیسے ہی سعودی معاشرہ سیکولر ہوتا جا رہا ہے ویسے ہی خاندانی مشکلات بڑھتی جا رہی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں